76

عوامی مسائل کے حوالے سے تحریک حقوق عوام اپر چترال کے وفد کی ڈپٹی کمشنر اپر چترال سے ملاقات

بونی(نامہ نگار)تحریک حقوق عوام اپر چترال کے ایک وفد نے گذشتہ روز ڈپٹی کمشنر اپر چترال شاہ سعود صاحب سے ملاقات کی۔وفد اپر چترال کے تمام علاقوں سے تحریک کے نمائندے موجود تھے تاہم موجودہ وبائی صورت حال کے پیش نظر ایس او پیز پر عملدرآمد کرتے ہوئے تحریک حقوق عوام اپر چترال کے صرف دو عہدیداران نے تحریک کی نمائندگی کرتے ہوئے ڈپٹی کمشنر سے ملاقات کرکے عوامی مسائل سے انہیں آگاہ کیا۔ وفد نے بونی پل ٹو ریسٹ ہاؤس روڈ پر کام شروع کروانے پر ڈی سی کا شکریہ ادا کیا اور روڈ سائیڈ پر نکاسی کے نالوں کا کام بھی شروع کروانے کا مطالبہ کیا جس پر ڈی سی نے کام جلد شروع کروانے کی ہدایت کی۔وفد نے ریشن بجلی گھر پر کام کی سست رفتاری پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا جس پر ڈی سی نے کام تیز کروانے کا وعدہ کیا، ساتھ ساتھ چترال۔بونی روڈ کی صفائی اور مرمت کے حوالے سے چند دن کے اندر کام شروع کرنے کا وعدہ کیا۔وفد نے پرواک ڈسپنسری کیلئے اسٹاف فراہمی، استارو پل اور متبادل روڈ کی صورتحال سے ڈی سی کو آگاہ جس پر انہوں نے وعدہ کیا کہ ان مسائل کو ترجیحی بنیادوں پر حل کیا جائیگا۔ بعد ازاں استارو متبادل روڈ کی توسیع کے سلسلے میں تحریک حقوق عوام تورکہو کے صدر جلال الدین کے ہمراہ محکمہ سی اینڈ ڈبلیو کے ایس ڈی او سے بھی ملاقات کی اور ایس۔ڈی۔او نے روڈ کی توسیع اور ضروری مرمت کی یقین دہانی کرائی۔ موژگول اور کوشٹ پل کے حوالے سے بھی تفصیلی گفتگو ہوئی اور ڈی۔سی نے اس سلسلے میں بھی اپنے بھرپور تعاون کا یقین دلایا۔ بمباغ روڈ کے حوالے سے وفد کو بتایا گیا کہ اس روڈ پر کام اسٹے لیا ہوا ہے۔ اس کے علاوہ مستوج روڈ کی صفائی اور مرمت کے حوالے سے بات کی تو بتایا گیا کہ مزکورہ روڈ سی۔پیک متبادل روڈ کے طور پر فائنل ہوکر این۔ایچ۔اے کے حوالے ہوچکا ہے۔ اس پر سی اینڈ ڈبلیو کام کروانے کا مجاز نہیں ہے۔ ساتھ ساتھ بونی ٹو سنوغر روڈ کی توسیع کے حوالے سے مطالبہ کیا۔ چونکہ اس روڈ کے سلسلے میں ایم۔این۔اے اور ایم۔پی۔اے کو بھی قرارداد دی جا چکی ہے۔ ڈی۔سی نے اس سلسلے میں بھی خصوصی دلچسپی لیکر توسیع کروانے کی یقین دہانی کرائی۔ آخر میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کے بعد کرایوں میں کمی نہ ہونے اور کرایہ ناموں پر عمل درآمد نہ ہونے پر اپنے شدید تحفظات کا اظہار کیا جس کے جواب میں ڈی۔سی نے وفد کو بتایا کہ کرایہ ناموں پرسو فیصد عمل درآمد پبلک کے تعاون کے بغیر ممکن نہیں۔ عوام سے گزارش ہے کہ جو ڈرائیور مقررہ کرائے سے زیادہ وصول کرتا ہے تو اس کی شکائت کریں۔ کرایہ ناموں پر عمل درآمد کو یقینی بنانے کی بھرپور کوشش کی جائے گی۔