جمعہ. مئی 20th, 2022


چترال کی سیاست کااک عہد تھا جو ختم ہوا، ایک درخشاں ستارہ تھا ڈوب گیا، تحمل و برداشت اور شرافت کا روشن چراغ تھاجو بجھ گیا۔پیار ومحبت اور رحم دلی کا ایک باب تھا جو بند ہوا۔رواداری تعاؤن اور سلیقے کی سیاست کا شہسوار اور دلوں کا شہزادہ تھا، جو بے شمار دلوں میں امر رہ کر خالق حقیقی سے جاملا۔ چترال کے غریب عوام کا مونس و غمخوار اور ہر دلعزیز نمائندہ تھا جو ہم میں نہیں رہا۔
شہزادہ صاحب!میدان سیاست میں آپ کی کمی ملکی اورعلاقائی سطح پر برس ہا برس تک محسوس کی جائے گی کیونکہ آپ وہ واحد لیڈر تھے جو چترال کے ہر گوشے کے مسائل بلکہ لوگوں کا بھی بھرپورادراک رکھتے تھے۔ چترال کی ترقی کی خاطر دشمن سے بھی ہاتھ ملانے میں عار محسوس نہیں کرتے۔ نسل پرستی،فرقہ واریت اور علاقہ پرستی سے کوسوں دور اجتماعی سوچ و اجتماعی ترقی کے علمبردار تھے۔ کتنے طلباء تھے جن کو اپنے خرچے سے پڑھایا جو آج بڑے عہدوں پر براجماں ہیں۔ان طلباء سے آپ کا کوئی ذاتی رشتہ یا خاندانی تعلق بھی نہیں تھا۔ کتنے غریب لوگوں کو سیاسی وابستگی سے ہٹ کر اپنی جیب سے بھی مدد فراہم کی۔ کبھی کسی سرکاری وغیر سرکاری ملازم سے ترش روئی سے پیش آنے دھمکانے یا اداروں میں مداخلت کا ہم نے کبھی کسی سے نہ سنا۔ کسی سے کوئی شکایت بھی ہو تو بہت پیار سے سمجھانے کی کوشش کی۔ بلاتحقیق الزام تراشی سے،جو کہ ہمارے سیاسی اور مذہبی لیڈروں کا اک وطیرہ بن گیا ہے، آپ کافی حد تک دور رہے۔ 1992سے دوران طالب علمی کامرس کالج، ایلمنٹری کالج اور ڈگری کالج چترال میں طلبہ سیاست اور پھر CAEH اور SRSP وRWSSP میں ملازمت کے دوران بارہا ان سے روابط اور تعلق اور ساتھ ساتھ خاندانی روابط اور رشتوں کی بنیاد پر آپ کی شخصیت کو پرکھا تو آپ چترال کے تمام سیاسی و مذہبی لیڈروں کے مقابلے میں اپنی تمام ترانسانی کمزوریوں اور کوتاہیوں کے باجود بہت بلند قامت بااصول، باکردار،مردم شناس، مدبر اور مخلص انسان وسیاست دان نظر آئے ہیں جو نہ صرف اپنے ووٹرز بلکہ مخالفین کے دلوں میں بھی بسنے کا ہنر خوب جانتے تھے۔ آپ سے جڑی کئی ایسی یادیں ہیں جنہیں صفحہ قرطاس پر لانا اور نئی نسل کو تاریخ چترال اور سیاست کے اس عظیم شہسوار کی عظمت اور کردار سے واقف کرنا چترال کے اہل قلم اور لکھاریوں کی ذمہ داری ہے۔
مثلِ ایوانِ سحَر مرقد فرُوزاں ہو ترا
نُور سے معمور یہ خاکی شبستاں ہو ترا
آسماں تیری لحد پہ شبنم افشانی کرے
سبزہ نَورُستہ اس گھر کی نگہبانی کرے۔